پاکستان میں سیاحت

اداریہ
12 جون ، 2022
دہشتگردی کے خاتمے سمیت پاکستان کی طرف سے بین الاقوامی سیاحت کے فروغ کی خاطراٹھائے گئے اقدامات کے حوصلہ افزا نتائج کا بین ثبوت عالمی بنک کے کنٹری ڈائریکٹر کا وہ ٹویٹ پیغام ہے جس سے اس شعبے کے اشاریوں میں 6 پوائنٹ کے اضافے کی تصدیق ہوتی ہے۔2019 کی سیاحت کے شعبے سے متعلق عالمی درجہ بندی میں پاکستان کا نمبر 89 تھا جو 2021 میں83 ہوگیا۔ عالمی بنک کے مطابق اشاریوں میں بہتری کی بنیادی وجہ سازگار کاروباری ماحول ، سیاحوں کی وسیع سکیورٹی اور اس شعبے کے ڈھانچے میں بہتری ہے۔ پاکستان اپنے قدرتی مناظر، چار ہزار سالہ پرانی تہذیب کے آثار، کوہ پیمائی اور تاریخی عمارتوں سمیت دیگر شعبہ جات کے حوالے سےعالمی سیاحوں کی توجہ کا آج اسلئے طلبگار ہوکر رہ گیا ہے کہ بدقسمتی سے گذشتہ 40 برس کے دوران سرد جنگ سمیت دہشتگردی اور خطے کے غیر موافق حالات نے انھیں ہم سے دور کردیااور سیاحت میں تیزی سے ترقی کرنے والا یہ ملک دوسروں سے پیچھے رہ گیا جبکہ پاکستان کو اس شعبے میں سب سے زیادہ جلاء 1970 کی دہائی میں ملی جس کے توسط سےملکی دستکاریاں دنیا بھر میں مقبول ہوئیں اور ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر مستحکم رہی۔ آپریشن ضرب عضب اور رد الفساد کی کامیاب تکمیل کے بعد جب امن و امان کے حالات معمول پر آنے لگے تو 2018 میں 19 لاکھ غیرملکی سیاح پاکستان آئے جسے دیکھتے ہوئے 2020 میں اسے بین الاقوامی سطح پر 10 بہترین دور دراز سیاحتی مقامات کی فہرست میں شامل کرلیا گیا۔ حالیہ حوصلہ افزا رپورٹوں کی روشنی میں یہ بات شدت سے محسوس کی جارہی ہے کہ سیاحت کے شعبے کو قومی معیشت کے دھارے میں باقاعدہ طور پر شامل کرنے کےلئے وہ تمام سقم دور کئے جائیں جو اس کی مکمل بحالی میں رکاوٹ بنے ہوئے ہیں۔
اداریہ پر ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائے دیں00923004647998