اداروں کو بغاوت پر اکسانے کا کیس‘عمران کی ضمانت منظور

29 اپریل ، 2023

اسلام آباد(اے پی پی)اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس عامرفاروق کی عدالت نے اداروں کو بغاوت پر اکسانے سے متعلق تھانہ رمنا میں درج مقدمہ میں سابق وزیر اعظم عمران خان کی3مئی تک ضمانت منظور کرتے ہوئے درخواست کے قابل سماعت ہونے پر بھی دلائل طلب کرلیے۔جمعہ کے روز درخواست ضمانت قبل از گرفتاری کی سماعت کے دوران عمران خان سخت سکیورٹی میں عدالت پیش ہوئے، قبل ازیں رجسٹرار آفس نے عمران خان کی درخواست پر بائیومیٹرک نہ ہونے اور براہ راست ہائیکورٹ آنے کا اعتراض عائد کیا جس پر عمران خان نے ہائیکورٹ پہنچنے پر بائیومیٹرک کرا دی،سماعت شروع ہونے پر عمران خان کے وکیل بیرسٹر سلمان صفدر اور فیصل چوہدری روسٹرم پر آگئے اور کہاکہ درخواست پر سے رجسٹرار آفس کے اعتراضات میں سے بائیو میٹرک کا اعتراض دور کروا دیا گیا ہے جبکہ دوسرا اعتراض ہے کہ ٹرائل کورٹ کیوں نہیں گئے، جس پر عدالت نے دوسرا اعتراض دورکرتے ہوئے رجسٹرار آفس کو عمران خان کی درخواست کو نمبر الاٹ کرنے کی ہدایت کی۔ایڈوکیٹ جنرل نے عمران خان کی درخواست پر سماعت پر اعتراض کرتے ہوئے کہاکہ عمران خان کی درخواست آتی ہے اور ساتھ ہی سماعت کیلئے مقرر ہوجاتی ہے، یہ تاثر ختم ہونا چاہیے کہ طاقتور شخص کو ریلیف ملتاہے، عمران خان خود کہتے ہیں کہ طاقتور کو قانون کے نیچے لانا چاہیے، اگر کل کوئی اللہ دتہ آئے تو انکو بھی ایسے ٹریٹ کیا جائےگا،جس پر چیف جسٹس نے کہاکہ آج ہی دو اللہ دتہ کی ضمانتیں منظور ہوگئی ہیں،اگر آپ کسی اللہ دتہ کی جانب سے پیش ہوئے اور ریلیف نہ ملا ہو تو بتائیے،آج ایک پہلے کیس آیا ابھی دو کیسز مارک کر رہاہوں، درخواست گزار پاکستان کا شہری ہے اور ضمانت انکا حق ہے۔ ایڈووکیٹ جنرل نے کہاکہ آپ بے شک انکو حفاظتی ضمانت دیں مگر انکو متعلقہ عدالت سے رجوع کرنے کا بھی کہیں۔