عمران مذاکراتی کمیٹی بنا کرسیاستدانوں کیساتھ بیٹھنے کو تیار نہیں ،رانا ثناء

02 جون ، 2023

لاہور(خصوصی نمائندہ)وفاقی وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ کہتے ہیں کہ عمران خان مذاکراتی کمیٹی بناتے ہیں لیکن سیاست دانوں کے ساتھ خود بیٹھنے کو تیار نہیں ہیں۔ وائس آف امریکہ کو خصوصی انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ اگر عمران خان مذاکرات کے لئے سنجیدہ ہیں تو وزیر اعظم شہباز شریف سے براہ راست رابطہ کریں، وہ اس پر مثبت جواب دیں گے۔ وہ کہتے ہیں کہ حکومت سمجھتی ہے کہ موجودہ حالات میں عمران خان کے ساتھ مذاکرات کئے تو انہیں شہداء کے خاندانوں کی طرف سے ردعمل کا سامنا کرنا پڑے گا لیکن اس کے باوجود عمران خان کو مذاکرات پر مثبت جواب دیا جائے گا۔ وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ کا کہنا ہے کہ 9 مئی کے پرتشدد واقعات منصوبہ سازی کے تحت کئے گئے اور اگر عمران خان فوجی تنصیبات پر حملوں کے منصوبہ ساز ہیں تو ان کے خلاف مقدمہ فوجی عدالت میں چلے گا۔ اس سوال پر کہ عمران خان تو کہتے ہیں کہ وہ نیب کی تحویل میں تھے اور انہیں نہیں معلوم ان کی گرفتاری کے بعد کیا ہوا کے جواب میں رانا ثناء اللہ نے کہا کہ "منصوبہ بندی ساری عمران خان کی تھی، اس نے ہر جگہ خود تھوڑی جانا تھا۔لوگوں کی باقاعدہ ڈیوٹیاں اور ذمہ داریاں لگائی گئیں تھیں، کس نے کہاں جانا ہے کیا کرنا ہے۔" پی ٹی آئی کی جانب سے ان کی خواتین کارکنان کے ساتھ جیل میں بدسلوکی کے الزامات پر رانا ثناء اللہ نے کہا کہ یہ صرف پراپیگنڈہ ہے اور اس کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ رانا ثناء اللہ کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی کے وہ رہنما جو نو مئی کی منصوبہ بندی اور جلاؤ گھیراؤ میں عملی طور پر ملوث نہیں، ان کے پاس موقع ہے کہ وہ اعلانیہ طور پر لاتعلقی کرکے مقدمات کا سامنا کرنے سے بچ سکتے ہیں۔ القادر ٹرسٹ میں عمران خان کے خلاف مقدمہ تو چلایا جا رہا ہے لیکن ملک ریاض کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی گئی کے جواب میں رانا ثناء اللہ نے کہا کہ اس معاملے میں ملک ریاض کے کردار کا جائزہ نیب نے لینا ہے۔