سستی اور ماحول دوست توانائی 2025میں گرین انرجی 20فیصد ہوگی

14 جون ، 2023

اسلام آباد(رپورٹ حنیف خالد)پی ڈی ایم حکومت آئی ٹی سیکٹر کی برآمدات کو الگے 5سال میں 15ارب ڈالر تک لے جانے کیلئے پرعزم ہے۔ سستی اور ماحول دوست توانائی 2025میں گرین انرجی 20فیصد ہوگی 2030میں 30فیصد کرکے دس سے 15فیصد تک توانائی کی بچت کا پلان , برآمدات میں اضافے کیلئے قومی پیداواری ماسٹر پلان پڑوسی ممالک کے ساتھ تجارتی معاہدے اور تجارتی پروگراموں جیسے مختلف اقدامات کئے جارہے ہیں یہ بات مالی سال 23-2022کا اقتصادی جائزہ بنانے والے حکومت پاکستان کے اکنامک ایڈوائزر وزارت خزانہ نے اکنامک سروے کے آغاز میں کہی دریں اثنامعلوم ہوا ہے کہ وزیراعظم شہباز شریف کا آج شروع ہونے والے آذربائیجان کا دو روزہ دورہ اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے وزیراعظم آذربائیجان کے صدر کی دعوت پر اپنے متعلقہ وزرا کا وفد لے کر جارہے ہیں آذربائیجان سے پہلے ہی پاکستان نے ماہانہ 8کارگو ایل این جی سستے نرخوں پر پورا سال خریدنے کامعاہدہ کر لیا ہے ماہرین کے مطابق وزیراعظم شہبازشریف اور ان کا وفد دو روزہ دورے کے دوران آذربائیجان سے سستی ایل این جی کے مزید کارگو سالانہ خریدنے کے ایم او یو کریں گے اقتصادی سروے کے مطابق سستی اور ماحول دوست توانائی کے حصول کیلئے حکومت گرین انرجی کا حصہ 2025میں 20فیصد اور 2030میں 30فیصد تک لے جانے کا پلان بنائے ہوئے ہے مزید براں حکومت 10سے 15فیصد تک توانائی کی بچت کے حصول کیلئے انرجی ایفی شینسی اور کنزرویٹو پلان پر عملدرآمد کرائے گی موجودہ حکومت پاکستان کے اکنامک ایڈوائزر ڈاکٹر امتیاز احمد نے اقتصادی سروے میں واضع کیا کہ موجودہ حکومت نے اپنی سیاسی ساکھ کو دائو پر لگا کر مشکل معاشی فیصلے کئے آئی ایم ایف کے ساتھ پی ٹی آئی حکومت کے کئے گئے معاہدے کی سخت ترین شرائط پر عمل کیا اور نہ صرف ملک کو دیوالیہ ہونے سے بچایا بلکہ ڈوبتی ہوئی معیشت کو درست سمت کی طرف گامزن کیا موجودہ مالی سال میں معاشی استحکام حاصل کرنے کیلئے مختلف اقدامات کی بدولت مالیاتی خسارہ 7.9فیصد سے کم کرکے 4.6فیصدکردیا گیا ہے جبکہ کرنٹ اکائونٹ ڈیفی سٹ میں 76فیصد کمی ہوئی ہے۔ مالی سال 2024میں حکومت ڈیجیٹل پاکستان منصوبے آئی ٹی کے فروغ کسان پیکج برآمدات اور محصولات میں اضافے صنعتی شعبے کے فروغ سے 3.5فیصد کی معاشی شرح نمو کے حصول کیلئے گامزن ہے حکومت نے مالی سال 2024کے لئے 1.5ٹریلین روپے کا ترقیاتی بجٹ مختص کیا ہے پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام کے منصوبوں میں ایکسپورٹس ایکویٹی 5ایز 4آر ایف سی پیک ایمپاورمنٹ انوائرنمنٹ انرجی شور آر ایف ری زرلینٹ ریکوری ری ہیبلیٹیشن اور ری کنسٹرکشن کو ترجیح دی جائے گی۔ اگلے مالی سال میں SDGsکے حصول کیلئے حکومت پیداوار میں اضافے جدت کے فروغ غذائی تحفظ کیلئے مختلف اقدامات کا آغاز کرنے جا رہی ہے۔