پال اسکلی نے ٹاور ہملٹس کو’’نو گو ایریا‘‘ قرار دینے کے بیان پر معافی مانگ لی

28 فروری ، 2024

لندن (سعید نیازی) رکن پارلیمنٹ اور سابق وزیر پال اسکلی نے لندن کے علاقے ٹاور ہملٹس کے بعض حصوں کو ’’نو گو ایریا‘‘ قرار دینے کے بیان پر معافی مانگ لی ہے۔ انہوں نے یہ بات پیر کو اسلامو فوبیا اور وزیراعظم کی اس حوالے سے وضاحت کے موضوع پر تبصرہ کرتے ہوئے کہی ۔ ٹاور ہملٹس کے ساتھ انہوں نے برمنگھم کے علاقے اسپارٹ ہل کے کچھ حصوں کو بھی نوگو ایریا قرار دیا تھا۔ تاہم منگل کو انہوں نے کہا کہ جو زبان استعمال کی اس پر افسوس ہے۔ سابق منسٹر فار لندن اور میئر لندن کے سابق امیدوار پال اسکلی کا کہنا تھا کہ ملک میں بعض ایسے علاقے موجود ہیں جہاں چھوٹے چھوٹے گروہوں کی اکثریت ہے جن کی وجہ سے لوگ مخصوص علاقوں میں بے چینی محسوس کرتے ہیں۔ کسی علاقے میں سفیدفام، سیاہ فام، مسلم یا کوئی دوسرا گینگ ہوسکتا ہے جو کمیونٹی کے تاثر کو متاثر کرتا ہے۔ تاہم انہوں نے کہا کہ ان کا یہ کہنا قطعی طور پر نامناسب تھا۔ انہوں نے اپنے انٹرویو کے ابتدا میں ہی میئر لندن سے متعلق لی اینڈرسن ایم پی کے موقف کو اشتعال انگیز قرار دیا اور کہا کہ لی اینڈرسن کو اپنے رویہ پر معافی مانگنی چاہیے۔ مسٹر اسکلی کے بیان کو ٹاور ہمٹس کونسل کے ترجمان مایوس کن قراردیا تھا۔ان کا کہنا تھا کہ یہ علاقہ اس بات کی مثال ہے کہ کسی طرح مختلف پس منظر کے لوگ اکٹھے رہتے ہیں، ترجمان کا مزید ہنا تھا کہ یہ علاقہ رہائشی، کام اور وزٹ کے حوالے سے ملک کے مصروف مقامات میں شمار ہوتا ہے اور ایک حالیہ سروے میں87فیصد لوگوں نے کہا تھا کہ وہ مل جل کر رہتے ہیں۔ تین لاکھ10ہزار افراد کی آبادی پر مشتمل ٹاور ہملٹس میں رہنے والے14فیصد اسی علاقے میں پیدا ہوئے جبکہ51فیصد انگلینڈ میں پیدا ہوئے جن کے بعد بنگلہ دیش میں پیدا ہونے والوں کا نمبر آتا ہے۔