نہتے فلسطینی اسلامی اُمہ کی طرف دیکھتے دیکھتے مایوس ہو گئے‘ ایرانی صدر

23 اپریل ، 2024

اسلام آباد (رپورٹ:حنیف خالد) اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر ابراہیم رئیسی نے کہا ہے کہ امریکہ‘ برطانیہ اور دوسرے متعدد یورپی ملک فلسطینیوں کی نسل کشی کیلئے اسرائیل کو اربوں ڈالرز کے ہتھیار اور دیگر سازو سامان مہیا کر رہے ہیں۔ غزہ کے نہتے فلسطینی اسلامی اُمہ کی طرف دیکھتے دیکھتے مایوس ہو گئے ہیں۔یہودو نصاریٰ کی اتحادی قوت کا مقابلہ اکیلا ملک نہیں کر سکتا‘ ’’اتحاد بین المسلمین‘‘ فلسفے کو اپنانا ہو گا اُن کا مسلم اُمہ کیلئے پیغام ہے ’’اتحاد بین المسلمین‘‘ اس پیغام سے پیر کو وزیراعظم شہباز شریف اور صدر آصف علی زرداری نے بھی اتفاق کیا ہےشام میں اپنے قونصل خانے پر حملے کا جواب دیدیا ۔ ایرانی صدر ابراہیم رئیسی ایوان صدر میں صدر آصف علی زرداری کی طرف سے دیئے گئے عشایئے میں شرکت کے بعد ایوان سہروردی پر واقع فائیو سٹار ہوٹل میں کم و بیش ایک ہزار بزنس مینوں‘ دانشوروں‘ علمائے کرام اور ہر شعبہ زندگی کے نمایاں افراد سے خطاب کر رہے تھے۔ اُن کا فی البدیہ خطاب ڈیڑھ گھنٹے تک جاری رہا جس کے دوران ہال فلسطینیوں کی حمایت اور اسرائیل و امریکہ کی مخالفت کے نعروں سے گونجتا رہا۔ وفاقی وزیر ہائوسنگ ریاض پیرزادہ نے حکومت پاکستان کی طرف سے سپاسنامہ پیش کیا۔ ایران کے سفیر رضا امیری مقدم نے افتتاحی کلمات ادا کئے۔ وفاقی وزیر ریاض پیرزادہ نے کہا کہ اسلامی برادر ملک ایران کے صدر ابراہیم رئیسی دنیا بھر کے پہلے سربراہ مملکت ہیں جنہوں نے 8فروری 2024ء کے عام انتخابات کے نتیجے میں بننے والی (ن) لیگ اور اتحادی جماعتوں کی حکومت کے سربراہ شہباز شریف سے مذاکرات کیلئے پاکستان کے دورے پر آئے ہیں۔ ایران دنیا کا پہلا ملک تھا جس نے 1947ء میں بننے والے پاکستان کو سب سے پہلے تسلیم کیا۔ وفاقی وزیر ہائوسنگ نے کہا کہ ایران اس لحاظ سے ہمارے دلوں کے قریب ہے کہ مسئلہ کشمیر کے بارے میں ایران اور ترکی پاکستانی موقف کی غیر متزلزل حمایت کرتے چلے آ رہے ہیں۔ ایران کے صدر ابراہیم رئیسی نے اپنے خطاب میں اسرائیل‘ امریکہ کی فلسطینیوں پر وحشیانہ بمباری کی مذمت کی اور کہا کہ ایران نے شام میں اپنے قونصل خانے پر اسرائیلی بمباری کا حساب اسرائیل پر کروز میزائلوں‘ ڈرون طیاروں اور بلاسٹک میزائلوں سے جواب دیا ہے۔ ایران کے صدر نے کہا کہ اسلامی اُمہ کا کوئی ایک ملک اکیلے یہودو نصاریٰ کی اتحادی قوت کا شاید مقابلہ نہ کر سکے لیکن اسلامی اُمہ کے 56ممالک اُنکے اتحاد بین المسلمین کے فلسفے کو اپنا کر اپنی مشترکہ قوت دشمنوں سے منوا سکے گی۔ اُنہوں نے کہا کہ پاکستان اور ایران برادر ہمسایہ ملک ہیں اور وہ دہشت گردوں کے قلع قمع کیلئے ایک دوسرے سے تعاون کرینگے۔ دونوں ملکوں کے درمیان اقتصادی شعبوں میں تعاون بڑھے گا جس کا فائدہ دونوں ملکوں کے عوام کو ہوگا۔ ایرانی صدر کے خطاب کا اردو میں اور وفاقی وزیر ہائوسنگ کی تقریر کا فارسی میں ساتھ ساتھ ترجمہ ایرانی ایمبیسی کی میڈیا آفیسر سیدہ فائزہ حسینی نے ساتھ ساتھ کیا۔ ساتھ ساتھ ترجمہ پر ایران کے صدر بھی خوش تھے۔ ایرانی صدر ابراہیم رئیسی نے کہا ہے کہ ایران پاکستان دو ہمسایہ اسلامی برادر ملک ہی نہیں بلکہ اُنکی تاریخ‘ تمدن‘ ثقافت تک ایک ہیں۔ دونوں کے بڑے قریبی تعلقات ہیں۔ اگرچہ ان تعلقات کو خراب کرنے کیلئے دشمنوں کی طرف سے ماضی میں کوششیں کی گئیں جو کہ دونوں ملکوں کی قیادت نے ناکام بنا دیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں پاکستانی عوام میں مقبولیت اسلئے حاصل ہے کہ ہم حق‘ انصاف اور خدا لگی بات کرتے ہیں۔ غزہ پر صیہونی حکومت کی طرف سے مظالم کے باوجود فلسطین کے عوام کی فتح ہوئی ہے۔ اسرائیل امریکہ کا جو پلان تھا کہ عرب ممالک کے ساتھ نارملائزیشن کر کے مسئلہ فلسطین ہمیشہ کیلئے ختم کر دینگے لیکن اُن کا یہ ناپاک منصوبہ ناکام بنا دیا گیا ہے۔ صدر ابراہیم رئیسی نے کہا کہ وہ ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ ای کی نیک تمنائیں‘ محبت بھرا پیغام پاکستانی عوام کیلئے لائے ہیں۔