جاوید لطیف کے الزامات درست نہیں، ثبوت دیں، رانا ثنااللہ

23 اپریل ، 2024

کراچی ( نیوز ڈیسک) ن لیگ کے رہنما راناثنا اللہ نے اپنی ہی جماعت کے ایک رہنما ئوں جاوید لطیف اور عرفان صدیقی کے بیانات مسترد کرتے ہوئے جاوید لطیف کے الزامات کے حوالے سے کہا ہے کہ یہ الزامات درست نہیں ہیں، اگر درست ہیں تو ثبوت دیں، ان خیالات کا اظہار انہوں نے جیو کے پروگرام ’’ آج شاہزیب خانزادہ کے ساتھ‘ میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ پروگرا م میں اظہار خیال کرتے ہوئے معروف صحافی مجیب الرحمٰن شامی نے جنرل باجوہ کے ساتھ اپنی ملاقات کا احوال بتاتے ہوئے کہا کہ باجوہ نے اپنی ماں کی قسم کھائی ہے کہ نوازشریف کو باہر بھجوانے میں یا عمران خان کی حکومت گرانے میں ان کا کوئی کردار نہیں تھا۔ عاصمہ شیرازی کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی اپنی قیادت کو ریلیف دلانا چاہتی ہے لیکن اسٹیبلشمنٹ ابھی بات نہیں کر رہی۔ ان کا کہنا تھا کہ ضمنی انتخاب سے یہ تاثر ختم ہوگیا ہے کہ عمران خان کھمبے کو ٹکٹ دیں تو وہ بھی جیت جائے گا۔ پروگرام میں معاشی ماہر سہیل خان نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ معیشت میں استحکام کے اشارے مل رہے ہیں۔ سابق سفارتکار ملیحہ لودھی نے کہا کہ پاک ایران تعلقات کو جو نقصان پہنچا اسے ختم کرنے کیلئے ایرانی صدر کا دورہ اہم ہے، ایران کے ساتھ تعلقات ٹھیک کرنا پاکستان کی اسٹریٹجک مجبوری ہے، پاکستان کو انڈیا اور افغانستان کی سرحدوں پر کشیدگی کا سامنا ہے، ایران کے ساتھ تجارت پر امریکا کی کوئی پابندی نہیں ہے، ایران سعودی عرب کے تعلقات بہتر ہونے سے پاکستان کیلئے سفارتی اور معاشی اسپیس کھل گئی ہے۔سابق وزیرداخلہ رانا ثناء اللہ نے انتخابی نتائج اور نواز شریف کو چوتھی بار وزیراعظم بنانے سے متعلق جاوید لطیف اور عرفان صدیقی کے بیانات مسترد کردیئے، بانی پی ٹی آئی کو دی گئی سزاؤں سے متعلق کہا کہ اس سے انہیں ہی فائدہ ہوا ہوگا، میں نے یہ نہیں کہا کہ بانی پی ٹی آئی سے کوئی ڈیل کرنا چاہتے ہیں، سیاسی جماعتیں بیٹھ کر ملک کو بحرانی کیفیت سے نکال سکتے ہیں، جاوید لطیف کی طرح زبانی کلامی الزامات پی ٹی آئی بھی لگارہی ہے، جاوید لطیف سے کہہ سکتے ہیں ثبوت ہیں تو لائیں عدالت میں چلتے ہیں۔ رانا ثناء اللہ نے کہا کہ عوام کے ساتھ ایسی دونمبری نہیں ہوسکتی کہ نواز شریف وزیراعظم بننا نہ چاہیں لیکن ہم ’پاکستان کو نواز دو‘ کا نعرہ لے کر الیکشن میں جائیں، آٹھ فروری کو سادہ اکثریت ملتی تو نواز شریف ہی وزیراعظم ہوتے۔ مجیب الرحمن شامی نے کہا کہ تحریک انصاف کی لہر ختم نہیں ہوئی،جنرل رحیم الدین مرحوم کے پوتے کی شادی میں محمد مالک کے ہمراہ جنرل قمر جاوید باجوہ سے ملاقات ہوئی، جنرل باجوہ نے اخبار نویسوں کی شکایتیں کیں جو ان کے بارے میں مختلف باتیں کہتے رہے، جنرل باجوہ نے تین بہت اہم باتیں کیں، جنرل باجوہ نے قرآن پاک پر ہاتھ رکھ کر قسم کھائی، انہوں نے اپنی والدہ کی قبر کی قسم بھی کھائی، ایک موقع پر جنرل باجوہ نے یہ بھی کہا کہ اگر میں غلط بیانی کررہا ہوں تو مجھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی شفاعت نصیب نہ ہو۔ مجیب الرحمن شامی نے بتایا کہ جنرل باجوہ نے بتایا کہ نواز شریف کے لاہور سے لندن جانے میں ان کا کوئی کردار نہیں تھا، جنرل باجوہ نے اس بات کی سختی سے تردید کی کہ انہوں نے امریکا کے ساتھ مل کر سازش کر کے عمران خان کی حکومت گرائی، جنرل باجوہ نے ایک اہم بات یہ کہی کہ انہوں نے نہ ایکسٹینشن کی خواہش ظاہر کی، نہ کسی سے تقاضا کیا، نہ کوشش کی نہ ہی کسی کو مجبور کیا، جنرل باجوہ کا کہنا تھا کہ ان پر جھوٹے الزامات لگائے جارہے ہیں، جس کے منہ میں جو بھی آتا ہے وہ کہہ دیتا ہے۔ سینئر صحافی و تجزیہ کار عاصمہ شیرازی نے کہا کہ پی ٹی آئی کے ووٹرز کی عمران خان کی رہائی کی امید دو ماہ میں مایوسی میں بدلتی جارہی ہے۔ سابق سفارتکار ملیحہ لودھی نے کہا کہ پاک ایران تعلقات کو جو نقصان پہنچا اسے ختم کرنے کیلئے ایرانی صدر کا دورہ اہم ہے۔